Oops! It appears that you have disabled your Javascript. In order for you to see this page as it is meant to appear, we ask that you please re-enable your Javascript!

Islam Allow Four Wives for Muslim Men to have at Same Time

Islam Allow Four Wives for Muslim Men to have at Same Time. Islam Allow Four Wives Muslim Men to have Four Wives at Same Time. The concept of four Wives at same time or marriages is in Islam. Islam Allow Four Wives Muslim Men to have Four Wives at Same Time means that a Muslim can keep four wives at same time and at same home.  Many time we got question about why does the Qur’an allow Muslim men to have four wives? Yesterday one of person has asked this question. Here bellow if details regarding Islam Allow Four Wives for Muslim Men to have at Same Time.

Aslaam Alaikum.
Dear Brother/ Sister,

I am an Hindu who finds The Holy Quran to be much more meaningful than any book i have ever read in my life. I have not finished reading the The Quran even once but I have one genuine doubt regarding Polygamy. I have read many other books & many articles but I am hardly convinced that Muslim women should make some sacrifice so that the other women who dont have partners because of high Female to male ratio, will have a happy married life & they will not be a public property as told by Dr. Zakir in a debate.

My question is would any man be ready for such a sacrifice if males were more than females?” even if the Quran advocates it. I cant think of such a sacrifice. I am not so broad minded. This is one serious constraint which is holding me back from accepting Islam in totality. Please help me in this regards.

Answer to the Question of an Hindu:

Concept of four marriages Islam Allow Four Wives Muslim Men to have Four Wives at Same Time
In the name of Almighty Allah, We praise Him, seek His help & ask for His forgiveness. Whoever Allah guides none can misguide & whoever He allows to fall astray, none can guide them aright. We bear witness that there is none worthy of worship but Allah Alone & we bear witness that Muhammad (PBUH) is His slave-servant & the seal of His Messengers.

Please find here below an answer to this frequently asked question from the website of our beloved & respected brother and teacher & one of the most respected scholars in Islam in this day and age, Dr. Zakir of Islamic Research Foundation.

1. POLYGAMY

Question:
Why is a man allowed in Islam to have more than one wife? i.e. why is polygamy allowed in Islam?

Answer: First of let me explain you about Polygamy. Polygamy means a system of marriage whereby one person has more than one spouse. Polygamy can be of two types. One is polygamy where a man marries more than one woman, & the other is polyandry, where a woman marries more than one man. In Islam, limited polygamy is permitted; whereas polyandry is completely prohibited.

Now here coming to the original point, why is a man allowed to have more than one wife in Islam? Islam Allow Four Wives for Muslim Men to have at Same Time

Allah Says in the Quran Chapter 4 Surah Nisaa verse 3 (part): 3 If ye fear that ye shall not be able to deal justly with the orphans, marry women of your choice two, or three, or four; but if ye fear that ye shall not be able to deal justly (with them) then only one. Bellow is video with details in Urdu language by woman which you must watch what she said.

The Quran is the only religious scripture in the world that says,”marry only one”.
The Quran is the only religious book, on the face of this earth, that contains the phrase marry only one. There is no other religious book that instructs men to have only one wife. In none of the other religious scriptures, whether it be the Vedas, the Ramayan, the Mahabharat, the Geeta, the Talmud or the Bible does one find a restriction on the number of wives. According to these scriptures one can marry as many as one wishes. It was only later, that the Hindu priests and the Christian Church restricted the number of wives to one.

Many Hindu religious personalities, according to their scriptures, had multiple wives. King Dashrat, the father of Rama, had more than one wife. Krishna had several wives.
In earlier times, Christian men were permitted as many wives as they wished, since the Bible puts no restriction on the number of wives. It was only a few centuries ago that the Church restricted the number of wives to one.
Polygyny is permitted in Judaism. According to Talmudic law, Abraham had three wives, and Solomon had hundreds of wives. The practice of polygamyy continued till Rabbi Gershom ben Yehudah (960 C.E to 1030 C.E) issued an edict against it. The Jewish Sephardic communities living in Muslim countries continued the practice till as late as 1950, until an Act of the Chief Rabbinate of Israel extended the ban on marrying more than one wife.

Hindus are more polygamous than Muslims
The report of the Committee of The Status of Woman in Islam, published in 1975 mentions on page numbers 66 and 67 that the percentage of polygamous marriages between the years 1951 and 1961 was 5.06 among the Hindus and only 4.31 among the Muslims. According to Indian law only Muslim men are permitted to have more than one wife. It is illegal for any non-Muslim in India to have more than one wife. Despite it being illegal, Hindus have more multiple wives as compared to Muslims. Earlier, there was no restriction even on Hindu men with respect to the number of wives allowed. It was only in 1954, when the Hindu Marriage Act was passed that it became illegal for a Hindu to have more than one wife. At present it is the Indian Law that restricts a Hindu man from having more than one wife and not the Hindu scriptures.

Let us now analyse why Islam Allow Four Wives a man to have more than one wife.

Quran permits limited polygamy
As I mentioned earlier, Quran is the only religious book on the face of the earth that says marry only one. The context of this phrase is the following verse from Surah Nisa of the Glorious Quran:
“Marry women of your choice, two, or three, or four; but if ye fear that ye shall not be able to deal justly (with them), then only one.”
[Al-Quran 4:3]

Before the Quran was revealed, there was no upper limit for polygamy and many men had scores of wives, some even hundreds. Islam put an upper limit of Four Wives. Islam gives a man permission to marry two, three or four women, only on the condition that he deals justly with them.
In the same chapter i.e. Surah Nisa verse 129 says:

“Ye are never able to be fair and just as between women….”
[Al-Quran 4:129]

Therefore polygamy is not a rule but an exception. It is not an order or commandment, but rather something which is permitted. Many people are under the misconception that it is compulsory for a Muslim man to have more than one wife.
Broadly, Islam has five categories of Dos and Donts:
i. Fard i.e. compulsory or obligatory
ii. Mustahab i.e. recommended or encouraged
iii. Mubah i.e. permissible or allowed
iv. Makruh i.e. not recommended or discouraged
v. Haraam i.e. prohibited or forbidden

Polygamy falls in the middle category of things that are permissible. It cannot be said that a Muslim who has two, three or four wives is a better Muslim as compared to a Muslim who has only one wife.

Average life span of females is more than that of males
By nature males and females are born in approximately the same ratio. A female child has more immunity than a male child. A female child can fight the germs and diseases better than the male child. For this reason, during the pediatric age itself there are more deaths among males as compared to the females.
During wars, there are more men killed as compared to women. More men die due to accidents and diseases than women. The average life span of females is more than that of males, and at any given time one finds more widows in the world than widowers.

India has more male population than female due to female infanticide and infanticide
India is one of the few countries, along with the other neighboring countries, in which the female population is less than the male population. The reason lies in the high rate of female infanticide in India, and the fact that more than one million female fetuses are aborted every year in this country, after they are identified as females. If this evil practice is stopped, then India too will have more females as compared to males.

World female population is more than male population
In the USA, women outnumber men by 7.8 million. New York alone has one million more females as compared to the number of males, and of the male population of New York one-third are gays i.e sodomites. The U.S.A as a whole has more than twenty-five million gays. This means that these people do not wish to marry women. Great Britain has four million more females as compared to males. Germany has five million more females as compared to males. Russia has nine million more females than males. God alone knows how many million more females there are in the whole world as compared to males.

Restricting each and every man to have only one wife is not practical
Even if every man got married to one woman, there would still be more than thirty million females in U.S.A who would not be able to get husbands (considering that America has twenty five million gays). There would be more than four million females in Great Britain, 5 million females in Germany and nine million females in Russia alone who would not be able to find a husband.
Suppose my sister happens to be one of the unmarried women living in USA, or suppose your sister happens to be one of the unmarried women in USA. The only two options remaining for her are that she either marries a man who already has a wife or becomes public property. There is no other option. All those who are modest will opt for the first.
In Western society, it is common for a man to have mistresses and/or multiple extra-marital affairs, in which case, the woman leads a disgraceful, unprotected life. The same society, however, cannot accept a man having more than one wife, in which women retain their honourable, dignified position in society and lead a protected life.

Thus the only two options before a woman who cannot find a husband is to marry a married man or to become public property. Islam prefers giving women the honourable position by permitting the first option and disallowing the second.
There are several other reasons, why Islam has permitted limited polygyny, but it is mainly to protect the modesty of women.

POLYANDRY

Question:
If a man is allowed to have more than one wife, then why does Islam prohibit a woman from having more than one husband?
Answer:
A lot of people, including some Muslims, question the logic of allowing Muslim men to have more than one spouse while denying the same right to women. Let me first state emphatically, that the foundation of an Islamic society is justice and equity. Allah has created men and women as equal, but with different capabilities and different responsibilities. Men and women are different, physiologically and psychologically. Their roles and responsibilities are different. Men and women are equal in Islam, but not identical.

Surah Nisa Chapter 4 verses 22 to 24 gives the list of women with who you can not marry and it is further mentions in Surah Nisa Chapter 4 verse 24 “Also (prohibited are) women already married”

The following points enumerate the reasons why polyandry is prohibited in Islam:
If a man has more than one wife, the parents of the children born of such marriages can easily be identified. The father as well as the mother can easily be identified. In case of a woman marrying more than one husband, only the mother of the children born of such marriages will be identified and not the father. Islam gives tremendous importance to the identification of both parents, mother and father. Psychologists tell us that children who do not know their parents, especially their father undergo severe mental trauma and disturbances. Often they have an unhappy childhood. It is for this reason that the children of prostitutes do not have a healthy childhood. If a child born of such wedlock is admitted in school, and when the mother is asked the name of the father, she would have to give two or more names! I am aware that recent advances in science have made it possible for both the mother and father to be identified with the help of genetic testing. Thus this point which was applicable for the past may not be applicable for the present.

Man is more polygamous by nature as compared to a woman.

Biologically, it is easier for a man to perform his duties as a husband despite having several wives. A woman, in a similar position, having several husbands, will not find it possible to perform her duties as a wife. A woman undergoes several psychological and behavioral changes due to different phases of the menstrual cycle.

A woman who has more than one husband will have several sexual partners at the same time and has a high chance of acquiring venereal or sexually transmitted diseases which can also be transmitted back to her husband even if all of them have no extra-marital sex. This is not the case in a man having more than one wife, and none of them having extra-marital sex. The above reasons are those that one can easily identify. There are probably many more reasons why Allah, in His Infinite Wisdom, has prohibited polyandry.

Allah says in the Holy Quran Chapter 33 Surah Ahzaab verse 36:
It does not behove a believing man and a believing woman that when Allah and His Messenger have given their decision in a matter, they should exercise an option in that matter of theirs. For whoever disobeys Allah and His Messenger, has indeed strayed into manifest error.

If one trusts, obeys, and follows the guidance and commands of Allah and His Messenger (saws), one can be assured of never ever being misled; but if one believes, obeys and follows any other guidance, other than that of Allah and His Messenger (saws), one can be assured of being led astray.

Whatever written of Truth and benefit is only due to Allahs Assistance and Guidance, and whatever of error is of me alone. Allah Alone Knows Best and He is the Only Source of Strength.

Thanks for reading article about Islam Allow Four Wives for Muslim Men to have at Same Time. Here below is in urdu language for those who not can understand English language Hope now the concept of Islam Allow Four Wives will clear. If you have any more confusion regarding Islam Allow Four Wives then write comments bellow so we clear regarding your Islam Allow Four Wives question. We will glad if we clae your any question about Islam Allow Four Wives for a Muslim at same time. If you can understand urdu language than video about Islam Allow Four Wives will clear your all questions very easy.

==============================

اسلام نے مسلم مرد کو اسی وقت وقت چار بیویوں کو اجازت دی ہے. چار بیویوں کا تصور اسی وقت یا شادی میں ہے. اسلام کو مسلم مرد کو ایک ہی وقت میں چار بیوی رکھنے کی اجازت دیتی ہے کہ مسلمان ایک ہی وقت اور اسی گھر میں چار بیویاں رکھے. کتنا وقت ہم نے سوال کیا ہے کہ قرآن کریم مسلم مردوں کو چار بیویوں کی اجازت دیتا ہے کیوں؟ ایک شخص نے اس سوال سے پوچھا ہے.
اسلم عالم
عزیز بھائی / بہن،

میں ایک ھندھ ہوں جو پایا جاتا ھے کہ قرآن کریم میں کسی بھی کتاب سے جو میری زندگی میں پڑھ پڑا ھے اس سے زیادہ معنی ہے. میں نے قرآن کو بھی ایک بار پھر قرآن پڑھنے کو ختم نہیں کیا ہے لیکن میرے ساتھ کثیر زبان کے بارے میں حقیقی شک ہے. میں نے بہت سی دوسری کتابوں اور بہت مضامین کو پڑھا ہے لیکن میں یہ سمجھتا ہوں کہ مسلمان عورتوں کو کچھ قربانی کرنا چاہئے تاکہ دوسرے عورتوں کو جنہوں نے اعلی عورت سے نرد تناسب کی وجہ سے شریک نہيں، ان کی شادی کی زندگی بہتر ہو گی. ڈاکٹر ذاکر نے ایک بحث میں کہا کہ عوامی جائیداد.

میرا سوال کیا ہے کہ کسی مرد کو اس قربانی کے لۓ تیار ہو جائے گا اگر مرد عورتوں سے کہیں زیادہ ہو؟ “اگرچہ قرآن اس کی وکالت کرتا ہے. میں ایسے قربانی کا سوچ نہیں سکتا. میں اس سے بہت زیادہ ذہن نہیں رکھتا. یہ ایک سنگین رکاوٹ ہے جس کا انعقاد کیا جا رہا ہے مجھے پوری طرح سے اسلام قبول کرنے سے. اس سلسلے میں میری مدد کریں.

ایک ہندو کے سوال کا جواب:

چار شادیوں کا تصور
اللہ تعالی کے نام پر، ہم اس کی تعریف کرتے ہیں، اس کی مدد طلب کریں اور ان کی بخشش طلب کریں. جو کچھ بھی اللہ ہدایت کرتا ہے اس کو گمراہ نہیں کرسکتا اور جو بھی اس کو گمراہ کرنے کی اجازت دیتا ہے وہ کسی کو ہدایت نہیں دیتا. ہم گواہی دیتے ہیں کہ عبادت کی کوئی لائق نہیں ہے لیکن اللہ تعالی اکیلے ہے اور ہم گواہی دیتے ہیں کہ محمد (ص) اپنے غلام نوکر اور اس کے رسولوں کی مہر ہے.

اسلامی محققین فاؤنڈیشن کے ڈاکٹر ذاکر، اس دن اور عمر میں ہمارے محبوب اور معزز بھائی اور استاد کی ویب سائٹ سے اس اکثر پوچھے جانے والے سوال کے جواب میں مندرجہ بالا سوال تلاش کریں.

1. پالیسی

سوال:
ایک آدمی کو اسلام میں کیوں ایک سے زیادہ بیوی کی اجازت ملی ہے؟ i.e. اسلام میں کثرت پسند کی اجازت کیوں ہے؟
جواب: سب سے پہلے مجھے کثیر المبارک کے بارے میں بتانا. کثافت کا مطلب شادی کی ایک نظام ہے جس میں ایک شخص سے زیادہ ایک سے زائد بیوی ہے. کثافت دو اقسام کی ہوسکتی ہے. ایک بہادر ہے جہاں کوئی مرد ایک سے زیادہ عورت سے شادی کرتا ہے، اور دوسرا پولینڈریری ہے، جہاں عورت ایک سے زیادہ انسان سے شادی کرتی ہے. اسلام میں، محدود کثیر حدیث کی اجازت ہے. جبکہ polyandry مکمل طور پر ممنوعہ ہے.

اب یہاں اصل نقطہ نظر آتے ہیں، ایک آدمی کو اسلام میں ایک سے زیادہ بیوی کی اجازت کیوں ملی ہے؟
اللہ تعالی قرآن کریم 4 باب سورت نساء آیت 3 (حصہ) میں فرماتا ہے: 3 اگر تم ڈرتے ہو کہ تم یتیموں کے ساتھ انصاف سے نمٹنے کے قابل نہ ہو، اپنی پسند کی عورتوں کو دو یا تین یا چار سے شادی کرو؛ لیکن اگر تم ڈرتے ہو تو تم صرف انصاف سے نمٹنے کے قابل نہیں ہو گے Bellow ویڈیو کی زبان سے اردو زبان میں ویڈیو ہے جسے آپ کو یہ دیکھنا ضروری ہے کہ اس نے کیا کہا.

قرآن دنیا میں واحد مذہبی کتاب ہے جو کہتا ہے کہ “صرف ایک ہی شادی”.
قرآن صرف ایک مذہبی کتاب ہے، اس زمین کے چہرے پر، جس میں جملہ صرف ایک سے شادی ہوتی ہے. وہاں کوئی مذہبی کتاب نہیں ہے جو مردوں کو صرف ایک بیوی کی ہدایات دیتا ہے. دوسرے مذہبی صحیفوں میں سے کوئی بھی، یہ ویڈاس، رامان، مہابھرت، گیٹا، طلسم یا بائبل چاہے وہ بیویوں کی تعداد پر پابندی لگائے. ان صحیفیات کے مطابق کوئی ایک سے زیادہ خواہشات سے شادی کرسکتا ہے. یہ صرف اس کے بعد ہی تھا، کہ ہندوؤں کے پادریوں اور عیسائی چرچوں نے بیویوں کو ایک سے محدود کردیا.

بہت سے ہندو مذہبی شخصیات، ان کے صحائف کے مطابق، کئی بیویوں کی تھی. رام کا باپ بادشاہت، ایک سے زیادہ بیوی تھی. کرشنا نے کئی بیویاں تھیں.
ابتدائی زمانے میں، عیسائی مرد کو اجازت دی گئی تھی کہ وہ بہت سے بیویوں کے طور پر چاہتے ہیں، کیونکہ بائبل نے بیویوں کی تعداد میں کوئی پابندی نہیں دی ہے. یہ صرف چند صدیوں سے پہلے تھا کہ چرچ ایک ہی عورتوں کی تعداد محدود ہوگئی تھی.
یہودیوں میں polygyny کی اجازت ہے. Talmudic قانون کے مطابق، ابراہیم تین بیویوں تھے، اور سلیمان نے سینکڑوں بیویوں کی تھی. کثیر المبارک کی روایت ربیبی گیروموم بن یہودہ (960 سی ای 1030 سی ای) تک جاری رہے گی. مسلم ممالک میں رہنے والے یہودی سادارڈ کمیونٹی نے یہ عمل رواں سال تک 1950 تک تک جاری رکھی، جب تک اسرائیل کے چیف ربیبیٹٹ نے ایک سے زیادہ بیوی سے شادی کرنے پر پابندی عائد کی.

ہندو مسلمانوں کے مقابلے میں زیادہ کثرت سے ہیں
1975 میں شائع ہونے والی خواتین کی حیثیت کی کمیٹی کی رپورٹ، صفحہ نمبر 66 اور 67 پر بیان کرتی ہے کہ 1951 اور 1 961 کے درمیان بہادر شادی کی شرح ہندوؤں کے درمیان 5.06 فیصد تھی اور مسلمانوں میں صرف 4.31 فیصد تھی. بھارتی قانون کے مطابق صرف مسلمان مردوں کو ایک سے زیادہ بیوی کی اجازت ہے. بھارت میں کسی بھی غیر مسلم کے لئے غیر قانونی طور پر یہ غیر قانونی ہے. یہ غیر قانونی ہونے کے باوجود، مسلمانوں کے مقابلے میں ہندوؤں سے زیادہ سے زیادہ بیویاں ہیں. اس سے پہلے، یہاں تک کہ ہندوؤں پر یہاں تک کہ اجازت دی گئی خواتین کی تعداد کے حوالے سے کوئی پابندی نہیں تھی. یہ صرف 1954 میں تھا، جب ہندو شادی ایکٹ منظور ہو گیا تھا کہ یہ ہندوؤں کے لئے ایک سے زائد بیویوں کے لئے غیر قانونی بن گیا. اس وقت یہ ہندوستانی قانون ہے جس سے ایک ہندو سے زیادہ سے زیادہ بیوی اور ہندو صحیفیت نہیں رکھتی ہے.
اب ہم تجزیہ کرتے ہیں کہ اسلام کیوں انسان کو ایک سے زیادہ بیوی کی اجازت دیتا ہے.

قرآن مجید محدود کثرت سے اجازت دیتا ہے
جیسا کہ میں نے پہلے ذکر کیا ہے، قرآن زمین کے چہرے پر واحد مذہبی کتاب ہے جو صرف ایک ہی شادی کرتا ہے. اس فقرہ کا تناظر جلال قرآن کی سورت نیزہ کی مندرجہ ذیل آیت ہے:
“آپ کی پسند، دو یا تین، یا چار عورتوں سے شادی کرو، لیکن اگر تم ڈرتے ہو کہ تم ان کے ساتھ انصاف سے نمٹنے کے قابل نہیں ہو گے، تو صرف ایک ہی ہے.”
[النساء 4: 3]

قرآن مجید سے پہلے، کثیر المبارک کے لئے کوئی زیادہ حد نہیں تھی اور بہت سے افراد نے بھی کئی بیویوں کی تھی، جو کچھ بھی سینکڑوں تھے. اسلام نے چار بیویوں کی بالادستی حد تک رکھی ہے. اسلام انسان کو دو، تین یا چار خواتین سے شادی کرنے کی اجازت دیتا ہے، صرف اس شرط پر ہے کہ وہ ان کے ساتھ انصاف کرے.
اسی باب میں سورۃ النس آیت 129 میں فرماتا ہے:

“آپ کبھی بھی منصفانہ اور صرف خواتین کے درمیان نہیں ہوسکتے ہیں.”
[الاسلام 4: 129]

لہذا کثرت سے قاعدہ نہیں بلکہ ایک استثناء ہے. یہ حکم یا حکم نہیں ہے، بلکہ جس چیز کی اجازت ہے. بہت سے لوگ اس غلط فہمی کے تحت ہیں جو مسلمان آدمی کے لئے ایک سے زائد بیوی کو لازمی ہے.
واضح طور پر، اسلام میں پانچ اقسام ہیں جو دو اور ڈونٹس ہیں:
میں. فورڈ آئی لازمی یا واجب ہے
ii. مستحاب آئی ای کی سفارش کی گئی یا حوصلہ افزائی
iii مباہ ای اجازت جائز یا اجازت دی
iv. ماکرو آئی کی سفارش یا حوصلہ افزائی نہیں
وی حرمام یعنی ممنوعہ یا حرام ہے

متعدد چیزوں کے درمیانے درجے میں کثرت سے گر جاتا ہے جو جائز ہے. یہ کہا جا سکتا ہے کہ ایک مسلمان جو دو، تین یا چار بیویاں ہیں وہ مسلمان ہیں جو مسلمانوں کے مقابلے میں ایک ہی بیوی ہے.

خواتین کی اوسط زندگی کا انداز مردوں کے مقابلے میں زیادہ ہے
فطرت مردوں اور عورتوں کی طرف سے تقریبا اسی تناسب میں پیدا ہوتا ہے. ایک بچہ بچے کے مقابلے میں زیادہ مصیبت ہے. ایک بچہ بچہ نارمل بچے سے بہتر بیماریوں اور بیماریوں سے لڑ سکتا ہے. اس وجہ سے، بچے کی عمر کے دوران خود عورتوں کے مقابلے میں مردوں میں زیادہ مردہ ہیں.
جنگوں کے دوران خواتین کے مقابلے میں زیادہ مرد ہلاک ہوئے ہیں. خواتین کے مقابلے میں حادثات اور بیماریوں کی وجہ سے زیادہ مرد مر جاتے ہیں. خواتین کی اوسط زندگی کا دورانیہ مردوں کے مقابلے میں زیادہ ہے، اور کسی بھی وقت کسی کو بیوہ سے زیادہ دنیا میں زیادہ بیوہ ملتی ہے.

خاتون بچے کی پیدائش اور پیدائش کی وجہ سے خواتین کی نسبت زیادہ مرد آبادی ہے
بھارت دوسرے ممالک کے ساتھ ساتھ، کچھ ممالک میں سے ایک ہے، جس میں خواتین کی آبادی مرد آبادی سے کم ہے. اس وجہ سے بھارت میں خاتون بچے کی موت کی شرح میں واقع ہے، اور حقیقت یہ ہے کہ ہر سال ایک لاکھ سے زائد خواتین جناب خواتین اس طرح کے ملک میں ہر سال منسوخ کردیئے جاتے ہیں. اگر یہ شرائط روک دی جاتی ہے تو پھر مردوں کے مقابلے میں بھارت بھی زیادہ خواتین ہوں گے.

عالمی خاتون آبادی مرد آبادی سے زیادہ ہے
ریاستہائے متحدہ امریکہ میں خواتین کو مردوں کی تعداد 7.8 ملین تک پہنچ گئی ہے. نیویارک میں مردوں کی تعداد کے مقابلے میں صرف ایک ملین سے زائد خواتین ہیں، اور نیو یارک کی مرد آبادی میں سے ایک تیسری سوڈومائٹ ہم جنس پرست ہیں. یو ایس ای مجموعی طور پر پچاس ملین سے زائد اجزاء ہیں. اس کا مطلب ہے کہ یہ لوگ خواتین سے شادی نہیں کرنا چاہتے ہیں. برطانیہ کے مقابلے میں برطانیہ میں 4 ملین سے زیادہ خواتین ہیں. جرمنی کے مقابلے میں جرمنی کے مقابلے میں پانچ لاکھ عورتیں ہیں. روس میں مردوں کی نسبت 9 لاکھ عورتیں ہیں. خدا اکیلے جانتا ہے کہ مردوں کے مقابلے میں پوری دنیا میں کتنے لاکھوں عورتیں موجود ہیں.

ہر مرد کو محدود کرنے کے لئے صرف ایک ہی بیوی کو عملی نہیں ہے
یہاں تک کہ اگر ہر شخص نے ایک عورت سے شادی کی ہے، تو اس میں اب بھی 30 ملین سے زائد خواتین ہو گی. جو شوہر کو حاصل کرنے کے قابل نہیں ہو گی (اس کے بارے میں امریکہ کی پچاس لاکھ ہم جنس پرستی ہے). برطانیہ میں 4 ملین سے زائد خواتین، جرمنی میں 5 ملین خواتین اور روس میں نو ملین عورتیں موجود ہیں جو شوہر کو تلاش نہیں کرسکیں گے.
فرض کریں میری بہن امریکہ میں رہنے والی غیر شادی شدہ خواتین میں سے ایک ہوتا ہے، یا فرض کریں کہ آپ کی بہن امریکہ میں غیر شادی شدہ خواتین میں سے ایک ہو. اس کے لئے صرف دو اختیار باقی ہیں کہ وہ ایک ایسے شخص سے شادی کرے جو پہلے ہی بیوی ہو یا عوامی جائیداد ہو. کوئی اور اختیار نہیں ہے. سب لوگ جو معمولی ہیں سب سے پہلے کا انتخاب کریں گے.
مغرب میں معاشرے میں، یہ ایک آدمی کے لئے مالکن اور / یا ایک سے زیادہ اضافی شادی شدہ معاملات ہے، اس صورت میں، عورت بے حد، غیر محفوظ زندگی کی طرف جاتا ہے. تاہم، اس معاشرے میں، ایک سے زیادہ بیوی رکھنے والے ایک مرد کو قبول نہیں کرسکتا، جس میں خواتین سماج میں ان کی قابل قدر، وقار کی حیثیت رکھتی ہے اور ایک محفوظ زندگی کی قیادت کرتی ہے.
اس طرح ایک خاتون سے پہلے صرف دو اختیارات ہیں جو شوہر کو تلاش نہیں کرسکتے، اس سے شادی شدہ شخص سے شادی کرنا یا عوامی جائیداد بننا ہے. اسلام کو پہلے اختیار کی اجازت دیتا ہے اور دوسری کو مسترد کرتے ہوئے خواتین کو عزت مند پوزیشن دینے کی ترغیب دیتا ہے.
کئی دیگر وجوہات ہیں، کیوں اسلام نے محدود کثیر جہان کی اجازت دی ہے، لیکن یہ بنیادی طور پر خواتین کی عدم اطمینان کی حفاظت کے لئے ہے.

پولینڈ

سوال:
اگر مرد کو ایک سے زائد بیوی کی اجازت ہے تو پھر ایک سے زیادہ شوہر رکھنے سے اسلام عورت کو عورت کو کیوں ممنوع قرار دیتا ہے؟
جواب:
بہت سے لوگ، جن میں بعض مسلمان بھی شامل ہیں، مسلم مردوں کو ایک سے زائد زوجین رکھنے کی اجازت دیتے ہیں، جبکہ خواتین کے حق کا انکار کرتے ہیں.
مجھے سب سے پہلے افسوسناک طور پر بتانا ہے کہ اسلامی معاشرے کی بنیاد انصاف اور مساوات ہے. اللہ نے مردوں اور عورتوں کو برابر کے طور پر پیدا کیا ہے، لیکن مختلف صلاحیتوں اور مختلف ذمہ داریوں کے ساتھ. مرد اور عورت مختلف، جسمانی طور پر اور نفسیات سے متعلق ہیں. ان کی کردار اور ذمہ داری مختلف ہیں. مرد اور عورت اسلام میں برابر ہیں، لیکن ایک ہی نہیں.

سورۂ نیزہ باب 4 آیات 22 سے 24 عورتوں کی فہرست فراہم کرتا ہے جن کے ساتھ آپ شادی نہیں کرسکتے اور سورت نساء باب 4 آیت 24 میں یہ بھی ذکر کیا جاتا ہے کہ “(ممنوعہ) خواتین پہلے ہی شادی شدہ ہیں”

مندرجہ ذیل نکات اس وجہ سے شمار کرتے ہیں کہ اسلام میں پولینڈینڈری کیوں حرام ہے:
اگر ایک آدمی سے زیادہ ایک بیوی ہو تو اس طرح کی شادی سے پیدا ہونے والے بچوں کے والدین کو آسانی سے شناخت کیا جاسکتا ہے. باپ اور ماں کی آسانی سے شناخت کی جا سکتی ہے. ایک عورت سے زیادہ ایک سے زیادہ شادی کرنے کی صورت میں، ایسی شادی کی پیدائش صرف بچوں کی ماں کی شناخت کی جائے گی اور نہ ہی باپ. اسلام والدین، ماں اور والد دونوں کی شناخت پر زبردست اہمیت دیتا ہے. ماہر نفسیات ہمیں بتاتے ہیں کہ جو اپنے والدین کو نہیں جانتے ہیں، خاص طور پر ان کے والد بہت سخت ذہنی صدمے اور پریشان ہیں. اکثر ان کا ناخوش بچپن ہے. اس وجہ سے یہ ہے کہ طوائف کے بچوں کو صحت مند بچپن نہیں ہے. اگر اس طرح کی شادی سے پہلے پیدا ہونے والا بچہ سکول میں داخل ہوجاتا ہے، اور جب ماں باپ کے نام سے پوچھا جاتا ہے تو اسے دو یا زیادہ نام دینا ہوگا. مجھے معلوم ہے کہ سائنس میں حالیہ ترقی نے جینیاتی جانچ کی مدد سے اس کی ماں اور والد دونوں کی نشاندہی کی ہے. اس طرح اس نقطۂٔ جو جو ماضی کے لئے قابل اطلاق تھا موجودہ کے لئے لاگو نہیں ہوسکتا ہے.

عورت کے مقابلے میں انسان فطرت کی طرف سے زیادہ کثرت سے ہے.

حیاتیاتی طور پر، ایک مرد کو کئی بیویوں کے باوجود شوہر کے طور پر اپنے فرائض انجام دینے کے لئے آسان ہے. ایک عورت، ایک ہی پوزیشن میں، بہت سے شوہر رکھنے کے، بیوی کے طور پر اپنے فرائض انجام دینے کے لئے ممکن نہیں مل جائے گا. ایک عورت حیاتیاتی سائیکل کے مختلف مراحل کی وجہ سے کئی نفسیاتی اور رویے کی تبدیلیوں سے گزرتا ہے.

ایک عورت جس کے پاس ایک سے زائد خاوند ہوں گے اسی وقت کئی جنسی شراکت دار ہو جائیں گے اور ان کے جنسی اجزاء یا جنسی طور پر منتقلی بیماریوں کو حاصل کرنے کا ایک بڑا موقع ملے گا جو بھی اپنے شوہر کو بھی منتقل کیا جا سکتا ہے یہاں تک کہ اگر ان میں سے کوئی اضافی شادی شدہ جنسی نہیں ہے. یہ ایک شخص سے زیادہ ایک بیوی کی صورت میں نہیں ہے، اور ان میں سے کوئی بھی اضافی شادی شدہ جنسی نہیں ہے. مندرجہ بالا وجوہات وجوہات ہیں جو کسی کو آسانی سے شناخت کر سکتی ہے شاید اس کی بہت سی وجوہات ہیں کہ اللہ، ان کی لاتعداد حکمت میں، پیلیینڈریری کو منع کیا ہے.

اللہ فرماتا ہے کہ قرآن کریم میں سورۃ 33 سورہ احقاب آیت 36:
یہ ایک مومن آدمی اور ایک مومن عورت سے بات نہیں کرتا کہ جب اللہ اور اس کے رسول نے معاملہ میں اپنا فیصلہ کیا ہے، تو وہ ان کے معاملات میں ایک اختیار کا استعمال کریں. کیونکہ جس نے اللہ اور اس کے رسول کی نافرمانی کی ہے تو بے شک گمراہی میں گمراہ ہوگیا ہے

اگر کوئی پروردگار اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) کی رہنمائی اور احکام کی پیروی کرتا ہے، تو اس کا کوئی یقین نہیں جاسکتا ہے. لیکن اگر کوئی ایمان لائے تو اللہ اور اس کے رسول (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے علاوہ کسی دوسرے رہنمائی کا اطاعت اور اس کی پیروی کرے، کسی کو گمراہ کرنے کی یقین دہانی کرائی جا سکتی ہے.

جو کچھ بھی سچائی اور فائدے کے بارے میں لکھا ہے وہ صرف اللہ کی مدد اور رہنمائی کی وجہ سے ہے، اور جو کچھ غلطی مجھ سے ہی ہے وہ صرف. اللہ اکیلے خوب جانتا ہے اور وہ طاقت کا واحد ذریعہ ہے.

Leave a Reply